518

تخلیقِ کائنات کا نبی کریم ﷺ کی تخلیق کے ساتھ مشروط ہونا

امام حاکم رضی اللہ عنہ نے اپنی کتاب المستدرک میں جو حدیث مبارکہ نقل کی ہے درج ذیل ہے:
عن ابن عباس رضی الله عنهما قال اوحی الله الی عيسی عليه السلام يا عيسی امن بحمد وامر من ادرکه من امتک ان يومنوا به فلولا محمد ما خلقت ادم ولو لا محمد ما خلقت الجنة ولا النار ولقد خلقت العرش علی الماء فاضطرب فکتب عليه لا اله الا الله محمد رسول الله فسکن.

ابن عباس رضی اللہ عنہما سے مروی ہے کہ اللہ تعالی نے فرمایا عیسی علیہ السلام کو وحی بھیجی کہ محمد صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم پر خود بھی ایمان لاؤ اور اپنی اس امت کو بھی حکم دو، جو ان کا زمانہ پائے کہ وہ بھی آپ پر ایمان لائیں۔ کہ محمد صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نہ ہوتے تو نہ جنت پیدا کرتا، نہ دوزخ۔ میں نے پانی پر عرش پیدا کیا، تو وہ کانپنے لگا، میں نے اس پر لکھا لا الہ الا الہ محمد رسول اللہ (اللہ کے سوا کوئی سچا معبود نہیں محمد صلی اللہ علیہ وآلہ وسل اللہ کے رسول ہیں)۔ تو اسے سکون آ گیا۔
حاکم المستدرک علی الصحیحین، 2 : 671، رقم 4227، دار الکتب العلمیۃ بیروت

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.